اردو۔ فارسی اور عربی میں رزمیہ شعر وادب

رجسٹریشن کی آخری تاریخ    ۳۱ دسمبر ۲۰۱۸

کانفرنس کے اغراض و مقاصد

 دو روزہ عالمی کانفرنس

30-31 جنوری 2019

اردو۔ فارسی اور عربی میں رزمیہ  شعر وادب: صلح و جنگ کی داستان

رزمیہ شاعری ہماری ادبی و تہذیبی وراثت کا اہم حصہ ہے ۔ رزمیہ شاعری کا  ایک امتیازی پہلو یہ بھی ہے کہ یہ ایشیائی تہذیب و ثقافت کے اظہار  کا ایک اہم وسیلہ بھی رہی ہے۔رزمیہ شاعری میں  انسانی  تہذیب و تمدن ، تاریخ وثقافت اور حماسہ  کےعلاوہ اس طرز شاعری میں انسانی اقدار و اخلاق اور  جذبات و  نفسیات کی بھی بھر پور عکاسی ہوئی ہے۔رزمیہ شاعری میں اس عہد کے معاشرتی اور سماجی زندگی کے ان پہلوؤں کو دیکھا جاسکتا ہے جو تاریخ کی کتابوں میں بھی نہیں ملتیں۔رزمیہ شاعری کا  دائرہ  بر صغیر تک محدود ہونے کے بجائے یہ کم و بیش پورے ایشیائی خطے کے ساتھ ایران و عرب کو اپنے دائرے میں سمیٹتی ہےاس طرح رزمیہ شاعری کے ذریعے ہندستان کے مشترکہ اقدار وروایات   جن کا تعلق قدیم ہندستان اورعرب و ایران سے ہے، ان اقدار کی شناخت بھی کی جاسکتی ہے ۔اس کے ساتھ ہی اردو شعریات کی ا س  عظیم روایت کی بازیافت بھی ممکن ہوسکے گی۔موضوعات و اسالیب کے نقطۂ نظر سے بھی رزمیہ شاعری ادبیات عالم میں بیش قیمت سرمائے کی حیثیت رکھتی ہے۔ہندستان میں  منظوم داستانیں ، مہابھارت  اور رامائن کے اردو تراجم ، شاہنامے اور مراثی ، ایران میں شاہنامہ فردوسی ، رستم و سہراب ، خمسے اور دیگر شہپارے  زبان و بیان اور اظہار کے گوناگوں پیرائے  عظیم ادبی سرمایے ہیں۔

رزمیہ شاعری کے انہی  متنوع جہات  پرورلڈ اوردو ایسو سی ایشن   ہندستانی زبانوں کا مرکز ، جواہر لعل نہرو یونیورسٹی کے اشتراک سے دو روزہ عالمی کانفرنس   کا انعقاد  کرنے جارہی ہے ۔جس میں  بیرون ملک سے اردو ، عربی اور فارسی کے ادیبوں کو دعوت دی گئی ہے ۔

کنوینر

پروفیسر خواجہ محمد  اکرام الدین

Two-Day World Conference

on

“Epic Poetry in Urdu – Arabic & Persian: A Saga of War and Peace”

On 30-31st January 2019

Epic a form of poetry has been adopted by poets of Urdu and Persian for exposition of great events in history and depiction of heroic and villainous nature of man in society. Adam and Satan appear on the same canvas of epic poetry in Urdu and Persian. The genre of literature unfolds the deeds of many a hero of Asia which otherwise would have gone unread, unnoticed and unsung in our society and many an event of prime importance to the history of man would have receded into oblivion if the poets have not adopted the epic form of literature. Thanks to the Urdu and Persian poets that besides developing the epic form of poetry they have also evolved and developed an exquisite language befitting to this literary form. The language of epic is eloquent, elegant and bold to express all forms of human emotions and feelings and capable of expressing epic in literary forms. These epics are also considered to be guiding force as far as human values and morals  are concern as a whole.

There are plenty of epics in the treasure trove of Urdu and Persian literature which cover in terms of space the Mahabharta , stretching from far east Indonesia to Gandhara in the North West Frontier Province of the Indian sub- continent and similarly the Greater Iran sprawling from the Caucasian to the Hindu Kush Mountains. The epics of Urdu and Persian narrate the sagas of human love and war from where many characters of human nature evolve and they act on the plains of time and space, which are beautifully documented by human genius. The most important epics of Urdu include a large number of ‘ Masnavies’ and ‘Marsias’ as well as the various translated versions of the great Indian epics  ‘Ramayana’ and ‘Mahabharata’ in Urdu. While on the other hand the most attractive Persian epics are the Shahnama of Firdausi, the Masnavi of Rumi and the Khamsa of Nizami. These epics of Urdu and Persian are the repositories of varied literary shades and human emotions, which continue to influence and impact poets of all climes and countries and have profusely, enriched word literature.