ادیبوں کا تعارف مضامین

فکر وآگہی کا شاعر : جمیل احسن

پروفیسر خواجہ محمد اکرام الدین

فکر وآگہی کا شاعر : جمیل احسن ( سوئیڈن )

ارود اور سویڈش زبان کے شاعر جمیل احسن سوئیڈن میں چار دہائیوں سے بھی زیادہ عرصے سے مقیم  ہیں شہریت کے لحاظ سے  وہ پاکستانی کم اور سویڈش زیادہ ہیں لیکن ان کے رگ و پے میں بر صغیر کی تہذیب و ثقافت  موج رواں کی طرح دوڑ تی ہے ۔ اس کا ثبوت ان کی شاعری اور دگر تحریریں ہیں ۔ جمیل احسن صاحب سوئیڈن میں اردو  کے فروغ و ترویج کے لیے  اپنے قیام کے ابتدائی دنوں سے کوشاں رہے ہیں ۔ انھوں نے’’ ایشین   اردو سوسائٹی ۔ سوئیڈن ‘‘ میں قائم  کی ۔ ھالنکہ دیگر یوروپی ممالک کی بہ نسبت یہاں  ہند و پاک کے لوگ کم ہیں یعنی اردو بولنے والے کم ہیں ایسے میں اس طرح کی سوسائٹی کے قیام کا قیام اور مسلسل  تقریبات کا اہتمام کرنا  یہ  نہ صرف اردو کے فروغ کے لیے نئی راہیں کھلنے کے مترادف تھیں بلکہ اس سے دیار غیر میں  تہذیبی روابط کو بھی اچھا خاصہ فروغ ملا۔ قارئین کو یہ بھی جان کر حیرت ہوگی کہ  جمیل احسن صاحب’’ منزل‘‘ کے نام سے  ایک رسالہ  بھی نکالتے ہیں  جو  1987سے پابندی سے شائع  ہورہاہے ۔ ہم مہجری ادب کی باتیں  اکثر کرتے ہیں لیکن مہجری ادیبوں کو  کم  جانتے ہیں اور جہاں تک ان کی خدمات کے اعتراف کی بات ہے تو ہم  نے بہت کم کیا ہے ۔ جمیل احسن صاحب کی   خدمات  اور تخلیقات کا چار دہائیوں پر پھیلا ہوا ہے ۔بے لوث اردوکی خدمت کر رہے ہیں  ان کی خدمات کو ہم عقیدت سے سلام پیش کرتے ہیں اور یہ مختصر تحریر ان  کی خدمات کا اعتراف نامہ ہے ۔

جمیل احسن صاحب کا تعلق اولیا کی سر زمین  ملتان  سے ہے ۔ وہ علمی و ادبی گھرانے کے چشم و چراغ  ہیں ۔ ان کے والد ماجد ماہر خطاط اور علم کے قدردان تھے ،اردو ، عربی اور فارسی زبان  پر قدرت حاصل تھی ان کے گھرانے میں کئی مشہور شخصیات   نے اپنے علم و فضل سے  ملک و ملت کی علمی و ادبی خدمت کی ہے ۔ اسی ماحول میں جمیل احسن کی پرورش ہوئی اسی لیے  وراثت میں یہ ادبی ذوق  انھیں ملا ۔

جمیل صاحب سے غائبانہ  ملاقاتیں رہی ہیں لیکن  گذشتہ  برس  برلن کی ایک محفل میں ہم ساتھ ساتھ تھے ، انھیں قریب سے دیکھا  تو وہ جتنے منسکر المزاج نظر آئے اس سے کئی گنا ان کی شخصیت بڑی نظر آئی واقعی وہ اسم بامسمیٰ ہیں ۔ بطور انسان  انتہائی احسن او ر  بطور شاعر  جمالیاتی  ذوق  سے  بھر پور ۔ ان کی شاعری میں فکر و آگہی   کی مضطرب موجیں    ہیں ، ان کے یہاں قدیم و جدید  شاعری کا حسین سنگم ہے ، ان کی شاعری میں  ایک نیا لب ولہجہ ، ان کی شاعری میں ہجرت کی کسک ضرور ہے مگر یہ کسک ان کو کمزرو نہیں کرتی بلکہ ان کی فکر کو جلا بخشتی ہے ۔  وہ غزلیں بھی کہتے ہیں اور نظمیں بھی دنوں میں فکر و فن کی گہرائیاں موجود ہیں ۔

ان کے اب تک پانچ  مجموعہ ٴ کلام  شائع ہوچکے ہیں جو اس طرح ہیں:

’تشنہ پانی مچھلی میں‘‘،’’روح کا سمندر‘‘،لفظ پَر رکھتے ہیں‘‘’’ہجرتوں کے سفر ‘‘ اور ’’آسودگی ‘‘ 

انھیں ان کی شاعری پر امریکہ سے ایوارڈ  بھی مل چکا ہے ۔ ان کی شاعری اتنی پختگی ہے اور ایسا کلاسیکی رچاؤ ہے کہ ہر شعر میں  ایک  نیا جہان معنی ملتا ہے ۔ جمیل کی زبان صاف ستھری اور سلیس ہے لیکن وہ نئی لفظیات کو گھڑتے ہیں اور نئے استعارے اور نئی ترکیبیں ان کو اپنے ہم عصروں میں ممتاز  کرتی ہیں ۔جیسے یہ اشعار :

                                              میں  خوشی بن کے چھلک جاؤں  تری آنکھوں سے             تیرے رخسار سے بہنا مری تقدیر میں ہے

                                             یہاں سے دھوپ  سے  چھاؤں گلے نہیں ملتی                      یہ راہ زیست ہے بہنا مری تقدیر میں ہے

                                             رات کی آنکھوں سے جتنے اوس کے موتی ڈھلے               پھول کے ماتھے پہ جھومر بن کے رخشندہ رہے

جمیل احسن کو  کئی ناقدوں نے ہجرت کا شاعر کہا  ہے ، یہ سہی ہے کہ ان کی شاعری میں ہجرت کی کسک بہت واضھ طور پر نمایاں ہے مگر جمیل احسن  ہجرت کی اس کسک  کو  مایوسی اور گھٹن  کے طور پر پیش نہیں کرتے بلکہ ان یادوں کو چعاغ کی مانند روشن کر کے اس سے  نئی نسل کو مشرقی تہذی کی روشنی دیکھاتے ہیں ۔ چھوٹی بحروں میں ان کے یہ اشعار دیکھیں :

ان  شہروں میں رہنا کیسا

۔جہاں  نہ مرغ اذانیں دیں

جہاں  نہ پھول میں خوشبو ہو

جہاں نہ پیار کے نغمے ہوں

پورا کلام پڑھیں تو اندازہ ہوتا ہے کہ محبت کی وہی خوشبو یہاں بھی بکھیرنے کی شاعر دعوت دیتا ہے ۔ اور’’ محبت کا نیا روپ‘‘  نظم کے یہ اشعار دیکھیں جس میں محبت کو دائمی شناخت بنانے کی باتیں کرتے ہیں  :

 مرا وجود ہی رشتوں  کی دائمی پہچان

مرے بغیر مکمل نہیں کوئی انسان

مجھے تو وقت کی گردش سلام کرتی ہے

یہ کائنات مرا احترام کرتی ہے

کہ میرا نام محبت ہے

لازوال ہوں  میں ۔

جمیل احسن  کے یہاں بہت سنجیدگی سے  تحریک اور انقلاب کی آہٹ بھی محسوس ہوتی ہے ۔ یہ اشعار دیکھیں :

                                                                حویلیوں سے اتر آئے دھوپ کٹیا تک             بلندیوں کو گرانے کا وقت  آیا ہے

                                                               پرانے پیڑ جڑوں سے اکھڑنے والے ہیں          نئے درخت لگانے کا وقت آیا ہے

اور ان کی نظم ’’ بھوک ‘‘ کے یہ اشعار :

                                                               اے اونچے شبستانوں  میں جلتی ہوئی شمعو         اک دن تو ذرا جھانک کے اس سمت بھی دیکھو

                                                               یہ ظلمت  وملام  میں لپٹے ہوئے چہرے              جن پر غم افلاس  کے سائے ہیں لرزتے 

                                                                                                ان جو کو میسر  نہیں مٹی کا دیا بھی

ہاں یہ ضرور ہے کہ یوروپ  کی چمک دمک اور مادی دنیا کو دیکھ کر کبھی ان کو یہ بھی احساس ہوتا ہے :

                                        شہر میں آگئے سکوں  کے لیے                کھا گئے اک حسین دھوکا ہم

                                       اپنی معصوم خواہشوں  کے عوض             کر رہے ہیں غموں سے سودا ہم

                             دیکھی جو میں نے اپنی تمنا لہو لہو          تیری ہتھیلیوں کی حنا یاد آگئی

                             چھوٹا سا بادل کا ٹکڑا                     دھوپ سے کس کس سر کو بچائے 

                     زندگی تھک کے ہار جاتی ہے                      اور انسان کی قضا کیا ہے

ایسا اس  لیے کہتے ہیں  کہ انھیں حقیقت  کچھ اور بتاتی ہے حالانکہ ان ان حقیقتوں  کا تعلق صرف  یوروپ سے نہیں رہا بلکہ مشرق کی دنیا بھی  مادیت کے لپیٹ میں ہے اسی لیے وہ غور کرتے ہیں تو نظر آتا ہے :

ہر ایک آنکھ  ہر اک دل کا آئینہ تھی مگر          ہر ایک چہرے کے اندر بھی ایک چہرہ تھا

دولت نے چاٹ لی ہے لبوں کی  شگفتگی       جھولی ہو جس کی خالی وہ مسرو سا لگے

پہلا سا التفات کہاں ، دوستی کہاں             شہہ رگ کے پاس رہ  بھی وہ دور سا لگے

مختلف موضوعات پر چند اشعار  ملاحظہ کریں :

اسےمرنے پہ دنیا پوجتی تھی             وہ زندہ تھا تو کس کے کام کا تھا

*****

ایک موہوم زندگی کے لیے        پیار کی شدتوں کو چھوڑ آئے

دل عجب  حادثوں کا مارا ہے       ہم کئی راحتوں کو چھوڑ آئے

****

ہر ایک شخص ضرورت ہے دوسر ے کی مگر         جمیل دست طلب شوق سے بڑھائے کون

*****

زندگی ہم نے تجھے ایسے بسر کرنا ہے

جیسے شعلوں نے سمندر پہ سفر کرنا ہے