شاعری

اسماءیاسر ، قاہرہ

اسماء یاسر  عین شمس یونیورسٹی ، قاہرہ  ، مصرمیں بی ۔اے ( تیسری جماعت) کی طالبہ ہیں ۔

یعنی ابھی تین سال سے اردو سیکھ رہی ہیں۔ بہت اچھا شعری ذوق رکھتی ہیں۔ میرا خیال ہے کہ قاہرہ

میں یہ پہلی ایسی طالبہ ہیں جو اردو میں شعر کہتی ہیں ۔ ان کی حوصلہ  افزائی کے لیے  قارئین کی خدمت میں

اسماء یاسر کی ایک عربی اور دو اردو نظمیں  پیش خدمت ہیں ۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

سأنتظر ..

سأنتظر وأنتظر حتىٰ الممات ..

فَمَا لِأوآنِ العشقِ من فوات

لَکَ مني ذا الوعدُ :

علىٰ إخلاصيَ الثّبَات ..

ولکَ من ذا القلب

أيمانٌ وكَلِمَـــٓــات

إن كان بين لقاؤنا قرونًا وسنوات

فأقسمُ أني سأقضيها بالأحلامِ والسُّبات

*****

تیرا پیار انمول ہے

تیرا پیار انمول ہے

تيرے پیار کے سامنے

یہ دنیا  بھی کافی نہیں

دن اور رات بس تو ہی تو

پھر بھی یہ دل بھرتا نہیں

اگر تجھ سے نہ ملی نظریں

تو میں یہ زندگی جیتی نہیں

دیکھ کر تجھے یہ سانسیں رکتی ہیں

لیکن بن دیکھے بھی چلتی نہیں

آگ ہے دل میں بہت

مگر بن تیرے جلتی نہیں

یہ دوری .. یہ مجبوری ..

جو دل پہ ہے آسان نہیں

کیسے جیوں ..

اور سانسیں لوں ..

یہ تجھ سے دور ہوتا نہیں

جدائی کازہر گر پلایا مجھے

پھر بھی اس سے مروں گی نہیں

اگرمیں مری بھی ترے پیا ر میں

تو یہ پیار کم ہوگا نہیں

تو یہ پیار کم ہوگا نہیں

****

کہاں ہے تو

اس جنگ میں کہاں ہے تو ؟

اس جشن میں کہاں ہے تو ؟

خوشی  شادمانی

تنہائی  اورغم

تیرا کوئی اثرہی  نہیں

مجھے بتا .. کہاں ہے تو ؟

مرنا جینا  ہے سب ایک سا

اب ترے بن

میرے دل سے دور

کہاں ہے تو ؟

زندگی زہرآلود میری ہوئی 

دوا ہے تو

کہاں ہے تو !؟

چین و سکون

بے قراری .. جنون

سب کچھ ہے تو

کہاں ہے تو !؟

مانگتی ہوں تیری وفا

کیوں مجھ سے ہے خفا ؟

اور اب .. کہاں ہے تو ؟

تقدیر میں تجھے لکھوں

سانسوں میں تجھے بھرلوں

اب تیرے بن کیسے جیوں

مجھے بتا .. کہاں ہے تو !؟

جتنا دھونڈوں .. نہیں ملتا

جتنا بلاؤں .. نہیں سنتا

اسے ہم کہیں پیار کیسے؟

سامنے میرے اب آ جا تو !!

کہاں ہے تو؟

About the author

admin

Add Comment

Click here to post a comment