شاعری

غزل

غزل ۔ 1

رہبر سلطانی

اے سایۂ شب، نالۂ سفاک بند ہو
نیندوں کی کھلی جاتی ہے پیچاک بند ہو

معمارِ ہوا ایسا بھی زندان بنائو
جس خاک سے آنکھیں ہوئیں نمناک، بند ہو

تشکیل نہ دے حلیۂ سفاک، ٹھہر جا
اب رہنِ ستم رقص ہوا، چاک بند ہو

چہروں کو پرکھنے کا ہنر کھو دیا ہم نے
خوش رنگیٔ دوراں ! یہ دھواں ، خاک بند ہو

قارون بنائے ہے زمینوں کو ٹھکانہ
وہ کیا کرے ؟ جس پہ درِ افلاک بند ہو

ساحل پہ تھکے ماندے بدن سوئے ہوئے ہیں
اے آبِ رواں! شورشِ بے باک بند ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل ۔ 2

اک جہاں آیا، اک جہان گیا
اب یقیں پاس ہے، گمان گیا

سرخیٔ جامِ عارضی کی طرف
لڑکھڑاتے ہوئے دھیان گیا

ایک سورج کے ڈوب جانے سے
یوں لگا سر سے آسمان گیا
روتے دھوتے ہوئے مکینوں کو
دور تک چھوڑنے مکان گیا

شب کے قدموں کی چاپ سنتے ہی
وہ ردائے نجوم تان گیا

اس لئے اب چراغ جلتا نہیں
کوئی آسیب گھر کو چھان گیا

رہبر سلطانی
147۔سابرمتی ہاسٹل، جواہر لعل نہرو یونیورسٹی ،نئی دہلی 110067
موبائل نمبر ۔9810975958
E-mail:rahbarlko786@gmail.com

About the author

admin

Add Comment

Click here to post a comment