شاعری

مہ جبیں غزل انصاری

مہ جبیں غزل انصاری

بپھرے دریا کی روانی سے نکل آئے ھیں

ھم بنا بھیگے ہی پانی سے نکل آئے ھیں

 شکر ہے اتنے سمجھدار ہوئے ہیں بچے

راجا رانی کی کہانی سے نکل آئے ہیں

 آئینہ دیکھ کے حیران ہوا ہے کیا کیا

آنکھ جھپکی تو جوانی سے نکل آئے ھیں

 کینہ رکھ کر تو  ملا کرتا تھا ہم سے اکثر

ھم تری چرب زبانی سے نکل آئے ھیں

: سن  لے اے ہم کو تن آسان سمجھنے والے

ھم دبے پاوءں کہانی سے نکل آئے ھیں

: ہم کہ ہجرت کے عذابوں سے گزرنے کے والے

آخرش نقل مکانی سے نکل آئے ھیں

 آپکے نقش مٹانے کی سعی لاحاصل

آپ پھر میری  کہانی سے نکل آئے ھیں

 زندگی اب نئ الجھن میں نہ الجھا ہم کو

ہم تری شعلہ بیانی سے نکل آئے ھیں

 کسطرح آئے یقیں اب تری باتوں پہ غزل

ہم تری شوخ بیانی سے نکل آئے ھیں

About the author

admin

Add Comment

Click here to post a comment