غزل، رہبر سلطانی

غزل ۔ 1

رہبر سلطانی

 

اے سایۂ شب، نالۂ سفاک بند ہو
نیندوں کی کھلی جاتی ہے پیچاک بند ہو

معمارِ ہوا ایسا بھی زندان بنائو
جس خاک سے آنکھیں ہوئیں نمناک، بند ہو

تشکیل نہ دے حلیۂ سفاک، ٹھہر جا
اب رہنِ ستم رقص ہوا، چاک بند ہو

چہروں کو پرکھنے کا ہنر کھو دیا ہم نے
خوش رنگیٔ دوراں ! یہ دھواں ، خاک بند ہو

قارون بنائے ہے زمینوں کو ٹھکانہ
وہ کیا کرے ؟ جس پہ درِ افلاک بند ہو

ساحل پہ تھکے ماندے بدن سوئے ہوئے ہیں
اے آبِ رواں! شورشِ بے باک بند ہو

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

غزل ۔ 2

اے سایۂ شب، نالۂ سفاک بند ہو
نیندوں کی کھلی جاتی ہے پیچاک بند ہو

معمارِ ہوا ایسا بھی زندان بنائو
جس خاک سے آنکھیں ہوئیں نمناک، بند ہو

تشکیل نہ دے حلیۂ سفاک، ٹھہر جا
اب رہنِ ستم رقص ہوا، چاک بند ہو

چہروں کو پرکھنے کا ہنر کھو دیا ہم نے
خوش رنگیٔ دوراں ! یہ دھواں ، خاک بند ہو

قارون بنائے ہے زمینوں کو ٹھکانہ
وہ کیا کرے ؟ جس پہ درِ افلاک بند ہو

ساحل پہ تھکے ماندے بدن سوئے ہوئے ہیں
اے آبِ رواں! شورشِ بے باک بند ہو

رہبر سلطانی
147۔سابرمتی ہاسٹل، جواہر لعل نہرو یونیورسٹی ،نئی دہلی 110067
موبائل نمبر ۔9810975958
E-mail:rahbarlko786@gmail.com